آئی بہار شورش طفلاں کو کیا ہوا

تاباں عبد الحی

آئی بہار شورش طفلاں کو کیا ہوا

تاباں عبد الحی

MORE BYتاباں عبد الحی

    آئی بہار شورش طفلاں کو کیا ہوا

    اہل جنوں کدھر گئے یاراں کو کیا ہوا

    غنچے لہو میں تر نظر آتے ہیں تہہ بہ تہہ

    اس رشک گل کو دیکھ گلستاں کو کیا ہوا

    یاقوت لب ترا ہوا کیوں خط سے جرم وار

    ظالم یہ رشک لعل بدخشاں کو کیا ہوا

    اس جامہ زیب غنچہ دہن کو چمن میں دیکھ

    حیراں ہوں میں کہ گل کے گریباں کو کیا ہوا

    آنے سے تیرے خط کے یہ کیوں دل گرفتہ ہے

    بتلا کہ تیری زلف پریشاں کو کیا ہوا

    کیوں گرد باد سے یہ اڑاتا ہے سر پہ خاک

    ہوں میں تو جائے قیس بیاباں کو کیا ہوا

    روتے ہی تیرے غم میں گزرتی ہے اس کی عمر

    پوچھا کبھی نہ تو نے کہ تاباںؔ کو کیا ہوا

    مأخذ :
    • کتاب : Roomani Ghazlen (Pg. 26)
    • Author : Samina Hijab
    • مطبع : Maktaba Jamia Limited, New Delhi (1997)
    • اشاعت : 1997

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY