آئینہ کے عکس سے گل سا بدن میلا ہوا

منیرؔ  شکوہ آبادی

آئینہ کے عکس سے گل سا بدن میلا ہوا

منیرؔ  شکوہ آبادی

MORE BYمنیرؔ  شکوہ آبادی

    آئینہ کے عکس سے گل سا بدن میلا ہوا

    صبح کے پرتو سے رنگ یاسمن میلا ہوا

    ہوگیا نام کدورت بھی لطافت کے خلاف

    عطر مٹی کا لگایا پیرہن میلا ہوا

    ہوگیا بٹنا غبار راہ جسم صاف پر

    رنگ نکھرا اور بھی جتنا بدن میلا ہوا

    مل گئی پوشاک لے جاتی ہیں جو زمیں مانگ کر

    حلۂ جنت ہوا جو پیرہن میلا ہوا

    صاف اے عریانئ وحشت کہے دیتا ہوں میں

    پوست کھینچوں گا اگر میرا بدن میلا ہوا

    خاکساری سے ہوئے جز و زمیں ہم بعد مرگ

    خاک کا پردا بنا ایسا کفن میلا ہوا

    مل گجے کپڑے پسینے میں معطر ہوگئے

    عطر میں دھویا گیا جو پیرہن میلا ہوا

    بعد مردن بھی تکلف سے کدورت دل میں ہے

    صحبت کافور سے اپنا بدن میلا ہوا

    ہوگیا مسی کا دھوکا صاف اہل دید کو

    دود قلیاں سے لب غنچہ دہن میلا ہوا

    طبع رنگیں کو مکدر سرد آہوں نے کیا

    دو نسیم صبح سے رنگ چمن میلا ہوا

    شیشۂ ساعت کی کیفیت دکھائی یار نے

    دل میں جب اس کے غبار ٓیا بدن میلا ہوا

    کیا تری تلوار بھی مجھ سے غبار آلود تھی

    خون دل کا رنگ کیوں اے تیغ زن میلا ہوا

    ہوگئی بے حس غبار آمد صیاد سے

    خاک تودا لوگ سمجھے جوہرن میلا ہوا

    کیا کدورت لائیں جس پے نمک کی گرمیاں

    شمع کافوری سے رنگ انجمن میلا ہوا

    شاعروں میں گفتگو آئی کدورت کی بہم

    صاف کہتا ہوں کہ اب رنگ سخن میلا ہوا

    کیا لطافت ہے کہ غلطی میں مکدر ہوگیا

    منہ لگاتے ہی ترا رنگ دہن میلا ہوا

    سالک راہ بتاں آخر کو پتھر ہوگئے

    ہوگیا بہاری جو رخت برہمن میلا ہوا

    وصل کی شب باتوں باتوں میں مکدر ہو گئی

    گفتگوئے بوسہ سے رنگ دہن میلا ہوا

    خاک میں مل کر نہ چھوڑا بوسۂ دیوار یار

    بن گیا روزن اگر رنگ دہن میلا ہوا

    کوچۂ گیسو میں کس کی خاک اوڑالائی صبا

    اے پری موباف جعد پرشکن میلا ہوا

    صاف گوئی سے غبار آئینہ میں آیا منیرؔ

    میری باتوں سے دل اہل سخن میلا ہوا

    مآخذ:

    • کتاب : Intekhab-e-Kalam Muneer Shikohabadi (Pg. 18)
    • Author : Riyazuddin
    • مطبع : Uttar Pradesh, Urdua Akademi, Lucknow (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY