آج بھی ابر مسرت آنسوؤں میں ڈھل گیا

ساحل مبارکپوری

آج بھی ابر مسرت آنسوؤں میں ڈھل گیا

ساحل مبارکپوری

MORE BYساحل مبارکپوری

    آج بھی ابر مسرت آنسوؤں میں ڈھل گیا

    پھر بھری برسات میں دل کا نشیمن جل گیا

    جستجوئے شب بجھاتی تو میاں کچھ خیر تھی

    روشنی کا کارواں چشم سحر میں کھل گیا

    صاحب مرہم تری جب سے ہوئی چشم کرم

    ایک ذرا سا آبلہ ناسور بن کر پھل گیا

    کیا خبر تھی جھالا باری مہرباں ہوگی ابھی

    پیڑ سمجھا تھا یہی طوفان آ کر ٹل گیا

    کچھ سمجھ آتا نہیں ترک وفا کیسے کروں

    آستین آرزو میں پھر سنپولا پل گیا

    روبرو ساحلؔ ہے لیکن اب بھلا کیا فائدہ

    سیر طوفاں کرتے کرتے جسم سارا گل گیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے