آج دل بیقرار ہے کیا ہے

میر حسن

آج دل بیقرار ہے کیا ہے

میر حسن

MORE BYمیر حسن

    آج دل بیقرار ہے کیا ہے

    درد ہے انتظار ہے کیا ہے

    جس سے جلتا ہے دل جگر وہ آہ

    شعلہ ہے یا شرار ہے کیا ہے

    یہ جو کھٹکے ہے دل میں کانٹا سا

    مژہ ہے نوک خار ہے کیا ہے

    چشم بد دور تیری آنکھوں میں

    نشہ ہے یا خمار ہے کیا ہے

    میرے ہی نام سے خدا جانے

    ننگ ہے اس کو عار ہے کیا ہے

    جس نے مارا ہے دام دل پہ مرے

    خط ہے یا زلف یار ہے کیا ہے

    کیوں گریبان تیرا آج حسنؔ

    اس طرح تار تار ہے کیا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY