آج خوں ہو کے ٹپک پڑنے کے نزدیک ہے دل

مصحفی غلام ہمدانی

آج خوں ہو کے ٹپک پڑنے کے نزدیک ہے دل

مصحفی غلام ہمدانی

MORE BYمصحفی غلام ہمدانی

    آج خوں ہو کے ٹپک پڑنے کے نزدیک ہے دل

    نوک نشتر ہو تو ہاں قابل تحریک ہے دل

    اے فلک تجھ کو قسم ہے مری اس کو نہ بجھا

    کہ غریبوں کو چراغ شب تاریک ہے دل

    ورم داغ کئی سامنے رکھ کر اس کے

    عشق بولا ''یہ اٹھا لے تری تملیک ہے دل''

    مجھ کو حیرت ہے کہ کی عمر بسر اس نے کہاں

    اس جہالت پہ تو نے ترک نہ تاجیک ہے دل

    کمر یار کے مذکور کو جانے دے میاں

    تو قدم اس میں نہ رکھ راہ یہ باریک ہے دل

    جامۂ داغ کو ملبوس کر اپنا دن رات

    کیونکہ یہ جامہ ترے قد پہ نپٹ ٹھیک ہے دل

    مصحفیؔ اک تو میں ہوں دست خوش دیدۂ شوخ

    تس پہ دن رات مرے درپئے تضحیک ہے دل

    مآخذ
    • کتاب : kulliyat-e-mas.hafii(Vol-4)(pdf) (Pg. 179)
    • Author : Ghulam hamdani Mashafi
    • مطبع : Qaumi council baraye -farogh urdu (2005)
    • اشاعت : 2005

    موضوعات:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY