Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

آج پھر ان سے ملاقات پہ رونا آیا

ذکی کاکوروی

آج پھر ان سے ملاقات پہ رونا آیا

ذکی کاکوروی

MORE BYذکی کاکوروی

    آج پھر ان سے ملاقات پہ رونا آیا

    بھولی بسری ہوئی ہر بات پہ رونا آیا

    غیر کے لطف و عنایات پہ رونا آیا

    اور اپنوں کی شکایات پہ رونا آیا

    عقل نے ترک تعلق کو غنیمت جانا

    دل کو بدلے ہوئے حالات پہ رونا آیا

    اہل دل نے کئے تعمیر حقیقت کے ستوں

    اہل دنیا کو روایات پہ رونا آیا

    ہم نہ سمجھے تھے کہ رسوائی الفت تو ہے

    اے جنوں تیری خرافات پہ رونا آیا

    وہ بھی دن تھے کہ بہت ناز تھا اپنے اوپر

    آج خود اپنی ہی اوقات پہ رونا آیا

    منع کرتے مگر اس طرح سے لازم بھی نہ تھا

    آپ کے تلخ جوابات پہ رونا آیا

    چھوڑیئے بھی مری قسمت میں لکھا تھا یہ بھی

    آپ کو کیوں مرے حالات پہ رونا آیا

    مأخذ :
    • Saaz-e-dil

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے