آج تک آزما رہی ہے مجھے

مظفر حنفی

آج تک آزما رہی ہے مجھے

مظفر حنفی

MORE BY مظفر حنفی

    آج تک آزما رہی ہے مجھے

    کربلا پھر بلا رہی ہے مجھے

    خون للکارتا ہے بڑھ بڑھ کر

    صاف آواز آ رہی ہے مجھے

    خنجر شمر تو وسیلہ ہے

    خود شناسی مٹا رہی ہے مجھے

    ذرہ ذرہ مرے لیے کوفہ

    زندگی ورغلا رہی ہے مجھے

    آج بھی لو بلند ہے میری

    موت کب سے بجھا رہی ہے مجھے

    مآخذ:

    • کتاب : 1971 ki Muntakhab Shayri (Pg. 80)
    • Author : Kumar Pashi, Prem Gopal Mittal
    • مطبع : P.K. Publishers, New Delhi (1972)
    • اشاعت : 1972

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY