عالم بے چہرگی میں کون کس کا آشنا

قیصر صدیقی

عالم بے چہرگی میں کون کس کا آشنا

قیصر صدیقی

MORE BYقیصر صدیقی

    عالم بے چہرگی میں کون کس کا آشنا

    آج کا ہر لفظ ہے مفہوم سے نا آشنا

    کون ہوتا ہے زمانے میں کسی کا آشنا

    لوگ ہونا چاہتے ہیں خود زمانہ آشنا

    سوچتا ہوں کون سی منزل ہے یہ ادراک کی

    ذرہ ذرہ آشنا ہے پتا پتا آشنا

    چاٹ جاتی ہے جنہیں سورج کی پیاسی روشنی

    کاش ہو جائیں کسی دن وہ بھی دریا آشنا

    تشنگی آئی سرابوں سے گزر کر آب تک

    ساحل دریا مگر اب تک ہے صحرا آشنا

    ذوق خود بینی کی تسکین انا کے واسطے

    کتنے ہی نا آشناؤں کو بنایا آشنا

    کاش ہو جائے تری آنکھوں پہ خوابوں کا نزول

    کاش ہو جائے ترا دل بھی تمنا آشنا

    کون پہچانے گا ہم کو کون پوچھے گا مزاج

    کون ہے اپنے سوا قیصرؔ ہمارا آشنا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    قیصر صدیقی

    قیصر صدیقی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY