عام حکم شراب کرتا ہوں

میر تقی میر

عام حکم شراب کرتا ہوں

میر تقی میر

MORE BYمیر تقی میر

    عام حکم شراب کرتا ہوں

    محتسب کو کباب کرتا ہوں

    ٹک تو رہ اے بنائے ہستی تو

    تجھ کو کیسا خراب کرتا ہوں

    بحث کرتا ہوں ہو کے ابجد خواں

    کس قدر بے حساب کرتا ہوں

    کوئی بجھتی ہے یہ بھڑک میں عبث

    تشنگی پر عتاب کرتا ہوں

    سر تلک آب تیغ میں ہوں غرق

    اب تئیں آب آب کرتا ہوں

    جی میں پھرتا ہے میرؔ وہ میرے

    جاگتا ہوں کہ خواب کرتا ہوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY