آمد تصور بت بیداد گر کی ہے

منیرؔ  شکوہ آبادی

آمد تصور بت بیداد گر کی ہے

منیرؔ  شکوہ آبادی

MORE BYمنیرؔ  شکوہ آبادی

    آمد تصور بت بیداد گر کی ہے

    دل کی بھی لوٹ خانہ خرابی جگر کی ہے

    تقدیر کی کجی ہو کہ ٹیڑھا ہو آسماں

    یہ سب عنایت آپ کی ترچھی نظر کی ہے

    اک بار تیر مار کے اب تک خبر نہ لی

    یا رب نگاہ مست یہ کس بے خبر کی ہے

    یہ رنگ و بو کہاں گل تر کو نصیب تھا

    اتری ہوئی قبا کسی رشک قمر کی ہے

    پھر بھی کبھی نگاہ کرم ہوگی اس طرف

    امید آج تک اسی پہلی نظر کی ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Noquush (Pg. B423 E433)
    • Author : Nuqoosh Press Lahore
    • مطبع : Nuqoosh Press Lahore (May June 1954)
    • اشاعت : May June 1954

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY