آنا ہے یوں محال تو اک شب بہ خواب آ

مصحفی غلام ہمدانی

آنا ہے یوں محال تو اک شب بہ خواب آ

مصحفی غلام ہمدانی

MORE BYمصحفی غلام ہمدانی

    آنا ہے یوں محال تو اک شب بہ خواب آ

    مجھ تک خدا کے واسطے ظالم شتاب آ

    دیتا ہوں نامہ میں تجھے اس شرط پر ابھی

    قاصد تو اس کے پاس سے لے کر جواب آ

    ایسا ہی عزم ہے تجھے گر کوئے یار کا

    چلتا ہوں میں بھی اے دل پر اضطراب آ

    یہ خستہ چشم وا ہے ترے انتظار میں

    اے صبح منہ دکھا کہیں اے آفتاب آ

    تا یہ شب فراق کی دیجور دور ہو

    اے رشک ماہ گھر میں مرے بے نقاب آ

    آب رواں و سبزہ و روئے نگار ہے

    ساقی شتاب ایسے میں لے کر شراب آ

    روئیں گلے سے لگ کے بہم خوب کوئی دم

    کیا دیکھتا ہے اے دل بے صبر و تاب آ

    بحر جہاں میں دیر شد آمد روا نہیں

    مانند قطرہ جا تو برنگ حباب آ

    قربانی آج در پہ ترے کرنی ہے مجھے

    لے کر کے تیغ تو بھی برائے ثواب آ

    شاید وہ تجھ کو دیکھ کے غم کھائے مصحفیؔ

    تو اس کے سامنے تو بہ چشم پر آب آ

    مآخذ
    • کتاب : kulliyat-e-mas.hafii(divan-e-doom) (Pg. 90)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY