آنکھ میں آنسو کا اور دل میں لہو کا کال ہے

اکبر حیدرآبادی

آنکھ میں آنسو کا اور دل میں لہو کا کال ہے

اکبر حیدرآبادی

MORE BY اکبر حیدرآبادی

    آنکھ میں آنسو کا اور دل میں لہو کا کال ہے

    ہے تمنا کا وہی جو زندگی کا حال ہے

    یوں دھواں دینے لگا ہے جسم اور جاں کا الاؤ

    جیسے رگ رگ میں رواں اک آتش سیال ہے

    پھیلتے جاتے ہیں دام نارسی کے دائرے

    تیرے میرے درمیاں کن حادثوں کا جال ہے

    گھر گئی ہے دو زمانوں کی کشاکش میں حیات

    اک طرف زنجیر ماضی ایک جانب حال ہے

    ہجر کی راہوں سے اکبرؔ منزل دیدار تک

    یوں ہے جیسے درمیاں اک روشنی کا سال ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    آنکھ میں آنسو کا اور دل میں لہو کا کال ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites