آنکھ میں اشک لیے خاک لیے دامن میں

گلنار آفرین

آنکھ میں اشک لیے خاک لیے دامن میں

گلنار آفرین

MORE BYگلنار آفرین

    آنکھ میں اشک لیے خاک لیے دامن میں

    ایک دیوانہ نظر آتا ہے کب سے بن میں

    میرے گھر کے بھی در و بام کبھی جاگیں گے

    دھوپ نکلے گی کبھی تو مرے بھی آنگن میں

    کہیے آئینۂ صد فصل بہاراں تجھ کو

    کتنے پھولوں کی مہک ہے ترے پیراہن میں

    شب تاریک مرا راستہ کیا روکے گی

    مرے آنچل میں ستارے ہیں سحر دامن میں

    کن شہیدوں کے لہو کے یہ فروزاں ہیں چراغ

    روشنی سی جو ہے زنداں کے ہر اک روزن میں

    عہد رفتہ کی تمنا کا فسوں زندہ ہے

    دل ناکام ابھی تک تری ہر دھڑکن میں

    ہمیں منظور نہیں اگلی روایات جنوں

    باخرد ہو گئی گلنارؔ دوانہ پن میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY