aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

آنکھ سے دل میں آنے والا

آرزو لکھنوی

آنکھ سے دل میں آنے والا

آرزو لکھنوی

MORE BYآرزو لکھنوی

    آنکھ سے دل میں آنے والا

    دل سے نہیں اب جانے والا

    گھر کو پھونک کے جانے والا

    پھر کے نہیں ہے آنے والا

    دوست تو ہے نادان ہے لیکن

    بے سمجھے سمجھانے والا

    آنسو پونچھ کے ہنس دیتا ہے

    آگ میں آگ لگانے والا

    ہے جو کوئی تو دھیان اسی کا

    آنے والا جانے والا

    حسن کی بستی میں ہے یارو

    کوئی ترس بھی کھانے والا

    ڈال رہا ہے کام میں مشکل

    مشکل میں کام آنے والا

    دی تھی تسلی یہ کس دل سے

    چپ نہ ہوا چلانے والا

    خواب کے پردے میں آتا ہے

    سوتا پا کے جگانے والا

    اک دن پردہ خود الٹے گا

    چھپ چھپ کے ترسانے والا

    آرزوؔ ان کے آگے ہے چپ کیوں

    تم سا باتیں بنانے والا

    مأخذ:

    Nishaan-e-Aarzu (Pg. ebook-26 page-18)

    • مصنف: انور حسین آرزو
      • اشاعت: 1968
      • سن اشاعت: 1968

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے