آنکھوں دیکھی بات کہانی لگتی ہے

شاہد ماہلی

آنکھوں دیکھی بات کہانی لگتی ہے

شاہد ماہلی

MORE BY شاہد ماہلی

    آنکھوں دیکھی بات کہانی لگتی ہے

    نئی نئی سی ریت پرانی لگتی ہے

    دشت نوردی لگتی ہے سوغات تری

    شب بے داری کوئی نشانی لگتی ہے

    تاشوں کا تھا کھیل سہانا بچپن کا

    چھو منتر سی بھری جوانی لگتی ہے

    شام ہوئی تو کالے سائے امڈ پڑے

    صبح کو تو ہر چیز سہانی لگتی ہے

    مریم جیسی دھلی دھلی اک مورت سی

    میرا جیسی کوئی دوانی لگتی ہے

    چہرا آنکھیں ہونٹ تمہارے جیسے ہیں

    صورت پھر بھی کیوں انجانی لگتی ہے

    ٹوٹے جیسے کوئی کھلونا مٹی کا

    پتھر جیسی سخت جوانی لگتی ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Kahein Kuch Nahein Hota (Pg. 117)
    • Author : Shahid Mahuli
    • مطبع : Miaar Publications (2003)
    • اشاعت : 2003

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY