آنکھوں میں بس رہا ہے ادا کے بغیر بھی

حسن نعیم

آنکھوں میں بس رہا ہے ادا کے بغیر بھی

حسن نعیم

MORE BYحسن نعیم

    آنکھوں میں بس رہا ہے ادا کے بغیر بھی

    دل اس کو سن رہا ہے صدا کے بغیر بھی

    کھلتے ہیں چند پھول بیاباں میں بے سبب

    گرتے ہیں کچھ درخت ہوا کے بغیر بھی

    میں ہوں وہ شاہ بخت کہ دربار حسن میں

    چلتا ہے اپنا کام وفا کے بغیر بھی

    منصف کو سب خبر ہے مگر بولتا نہیں

    مجھ پر ہوا جو ظلم سزا کے بغیر بھی

    بندوں نے جب سے کام سنبھالا ہے دہر کا

    نازل ہے روز قہر خدا کے بغیر بھی

    اردو غزل کے دم سے وہ تہذیب بچ گئی

    مٹنے کا جس کے گل تھا فنا کے بغیر بھی

    مآخذ:

    • کتاب : Kulliyat-e-Hasan Naim (Pg. 237)
    • Author : Ahmad Kafeel
    • مطبع : Qaumi Council Baraye Farogh-e-urdu Zaban (2006)
    • اشاعت : 2006

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY