آنکھوں میں جل رہا ہے پہ بجھتا نہیں دھواں

گلزار

آنکھوں میں جل رہا ہے پہ بجھتا نہیں دھواں

گلزار

MORE BYگلزار

    آنکھوں میں جل رہا ہے پہ بجھتا نہیں دھواں

    اٹھتا تو ہے گھٹا سا برستا نہیں دھواں

    پلکوں کے ڈھانپنے سے بھی رکتا نہیں دھواں

    کتنی انڈیلیں آنکھیں پہ بجھتا نہیں دھواں

    آنکھوں سے آنسوؤں کے مراسم پرانے ہیں

    مہماں یہ گھر میں آئیں تو چبھتا نہیں دھواں

    چولھے نہیں جلائے کہ بستی ہی جل گئی

    کچھ روز ہو گئے ہیں اب اٹھتا نہیں دھواں

    کالی لکیریں کھینچ رہا ہے فضاؤں میں

    بورا گیا ہے منہ سے کیوں کھلتا نہیں دھواں

    آنکھوں کے پوچھنے سے لگا آگ کا پتہ

    یوں چہرہ پھیر لینے سے چھپتا نہیں دھواں

    چنگاری اک اٹک سی گئی میرے سینے میں

    تھوڑا سا آ کے پھونک دو اڑتا نہیں دھواں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نامعلوم

    نامعلوم

    مآخذ:

    • کتاب : Yaar Julahe (Pg. 141)
    • Author : Yatindra Mishra
    • مطبع : Vaniprakashan (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY