آنکھوں پہ وہ زلف آ رہی ہے

آغا اکبرآبادی

آنکھوں پہ وہ زلف آ رہی ہے

آغا اکبرآبادی

MORE BY آغا اکبرآبادی

    آنکھوں پہ وہ زلف آ رہی ہے

    کالی جادو جگا رہی ہے

    زنجیر جو کھڑکھڑا رہی ہے

    وحشت کیا غل مچا رہی ہے

    لیلیٰ خاکہ اڑا رہی ہے

    مجنوں کو ہوا بتا رہی ہے

    زلفیں وہ پری ہلا رہی ہے

    دیوانوں کی شامت آ رہی ہے

    پامال خرام ہو چکے دفن

    پسنے کو بس اب حنا رہی ہے

    ہیں چال سے ان کی زندہ درگور

    مردوں پہ قیامت آ رہی ہے

    دل نے الفت سے زک اٹھائی

    آنکھوں دیکھا رلا رہی ہے

    گویا ہونے دے بے زبانی

    کیوں میرا گلا دبا رہی ہے

    آغاؔ صاحب گلی میں ان کی

    اک حور تمہیں بلا رہی ہے

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY