آپ ہی اپنا سفر دشوار تر میں نے کیا

نسیم سحر

آپ ہی اپنا سفر دشوار تر میں نے کیا

نسیم سحر

MORE BYنسیم سحر

    آپ ہی اپنا سفر دشوار تر میں نے کیا

    کیوں ملال فرقت دیوار و در میں نے کیا

    میرے قد کو ناپنا ہے تو ذرا اس پر نظر

    چوٹیاں اونچی تھیں کتنی جن کو سر میں نے کیا

    چل دیا منزل کی جانب کارواں میرے بغیر

    اپنے ہی شوق سفر کو ہم سفر میں نے کیا

    منزلیں دیتی نہ تھیں پہلے مجھے اپنا سراغ

    پھر جنوں میں منزلوں کو رہ گزر میں نے کیا

    ہر قدم کتنے ہی دروازے کھلے میرے لئے

    جانے کیا سوچا کہ خود کو در بدر میں نے کیا

    لفظ بھی جس عہد میں کھو بیٹھے اپنا اعتبار

    خامشی کو اس میں کتنا معتبر میں نے کیا

    زندگی ترتیب تو دیتی رہی مجھ کو نسیمؔ

    اپنا شیرازہ مگر خود منتشر میں نے کیا

    مأخذ :
    • کتاب : AURAAQ (Pg. 251)
    • Author : Wazir Agha, Sajjad Naqvi
    • مطبع : Auraaq Chauk, Urdu Bazar, Lahore (April, May 1982)
    • اشاعت : April, May 1982

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے