آپ کی آنکھ سے گہرا ہے مری روح کا زخم (ردیف .. و)

محسن نقوی

آپ کی آنکھ سے گہرا ہے مری روح کا زخم (ردیف .. و)

محسن نقوی

MORE BYمحسن نقوی

    آپ کی آنکھ سے گہرا ہے مری روح کا زخم

    آپ کیا سوچ سکیں گے مری تنہائی کو

    میں تو دم توڑ رہا تھا مگر افسردہ حیات

    خود چلی آئی مری حوصلہ افزائی کو

    لذت غم کے سوا تیری نگاہوں کے بغیر

    کون سمجھا ہے مرے زخم کی گہرائی کو

    میں بڑھاؤں گا تری شہرت خوشبو کا نکھار

    تو دعا دے مرے افسانۂ رسوائی کو

    وہ تو یوں کہیے کہ اک قوس قزح پھیل گئی

    ورنہ میں بھول گیا تھا تری انگڑائی کو

    موضوعات:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY