آپ نور افشاں ہیں رات کے اندھیرے میں

محفوظ الرحمان عادل

آپ نور افشاں ہیں رات کے اندھیرے میں

محفوظ الرحمان عادل

MORE BYمحفوظ الرحمان عادل

    آپ نور افشاں ہیں رات کے اندھیرے میں

    یا ستارے رقصاں ہیں رات کے اندھیرے میں

    ایک دن وہ ذروں کو آفتاب کر لیں گے

    دھوپ کے جو خواہاں ہیں رات کے اندھیرے میں

    کیوں نہیں جلا لیتے آنسوؤں کی قندیلیں

    لوگ کیوں ہراساں ہیں رات کے اندھیرے میں

    خوفناک آوازیں وحشیوں کے ہنگامے

    رونق بیاباں ہیں رات کے اندھیرے میں

    روشنی تو پہنچی ہے صرف چند لوگوں تک

    اب بھی کتنے انساں ہیں رات کے اندھیرے میں

    دن کی روشنی میں جو سب سے بے تکلف ہے

    ہم سے کیوں گریزاں ہیں رات کے اندھیرے میں

    تیرگی سے لڑنے کا حوصلہ نہیں جن میں

    ان کے جسم لرزاں ہیں رات کے اندھیرے میں

    اجلے اجلے چہروں پر عکس دل ربائی کے

    کس قدر نمایاں ہیں رات کے اندھیرے میں

    ڈھونڈتے ہیں سب اپنے اپنے ہم نواؤں کو

    آئنے پریشاں ہیں رات کے اندھیرے میں

    کس کے نقش ہائے پا رہنما ہوئے عادلؔ

    راستے درخشاں ہیں رات کے اندھیرے میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY