آراستہ بزم عیش ہوئی اب رند پئیں گے کھل کھل کے

ہیرا لال فلک دہلوی

آراستہ بزم عیش ہوئی اب رند پئیں گے کھل کھل کے

ہیرا لال فلک دہلوی

MORE BYہیرا لال فلک دہلوی

    آراستہ بزم عیش ہوئی اب رند پئیں گے کھل کھل کے

    جھکتی ہے صراحی ساغر پر نغمے ہیں فضا میں قلقل کے

    آ تجھ کو بنا دوں رشک چمن میزان محبت میں تل کے

    عارض کو گلوں کی رعنائی بل زلف کو بخشوں سنبل کے

    گلشن میں بہار آئے کہ خزاں مرجھائے کلی یا پھول کھلیں

    صیاد تجھے کیا مطلب ہے تو اشک گنے جا بلبل کے

    ہم اہل چمن کی نظروں میں کچھ اور ہی معنیٰ رکھتا ہے

    کلیوں کا چٹک کر کھل جانا پھولوں کا نکھرنا دھل دھل کے

    وہ چین تو شاید رضواں کو جنت میں کیا ملتا ہوگا

    جو مجھ کو سکوں مل جاتا ہے سائے میں کسی کی کاکل کے

    عشاق کے مرنے جینے کو اتنی ہی لگاوٹ کافی ہے

    اک چوٹ سی ترچھی نظروں کے دو چار جھکولے کاکل کے

    کون اس کی فضاؤں میں آ کر تخریب کے شعلے پھونک گیا

    آخر یہ وہی تو گلشن ہے رہتے تھے جہاں ہم مل جل کے

    اس دور کے پاگل انسانوں نفرت کی فراوانی کب تک

    گر آج نہیں تو کل تم کو رہنا ہی پڑے گا مل جل کے

    گر حد سے سوا پی لو گے فلکؔ پھر ہوش کہاں مے خانے کا

    دو چار ہی قطرے کافی ہیں پیچھے نہ پڑھو جام مل کے

    مأخذ :
    • کتاب : Harf-o-sada (Pg. 57)
    • Author : Hira lal Falak Dehlvi
    • مطبع : Hira lal Falak Dehlvi (1982)
    • اشاعت : 1982

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY