عاشق کی بھی کٹتی ہیں کیا خوب طرح راتیں

محمد رفیع سودا

عاشق کی بھی کٹتی ہیں کیا خوب طرح راتیں

محمد رفیع سودا

MORE BYمحمد رفیع سودا

    عاشق کی بھی کٹتی ہیں کیا خوب طرح راتیں

    دو چار گھڑی رونا دو چار گھڑی باتیں

    قرباں ہوں مجھے جس دم یاد آتی ہیں وہ باتیں

    کیا دن وہ مبارک تھے کیا خوب تھیں وہ راتیں

    اوروں سے چھٹے دل بر دل دار ہووے میرا

    برحق ہیں اگر پیرو کچھ تم میں کراماتیں

    کل لڑ گئیں کوچے میں آنکھوں سے مری آنکھیاں

    کچھ زور ہی آپس میں دو دو ہوئیں سمگھاتیں

    کشمیر سی جاگہ میں نا شکر نہ رہ زاہد

    جنت میں تو اے گیدی مارے ہے یہ کیوں لاتیں

    اس عشق کے کوچے میں زاہد تو سنبھل چلنا

    کچھ پیش نہ جاویں گی یاں تیری مناجاتیں

    اس روز میاں مل کر نظروں کو چراتے تھے

    تجھ یاد میں ہی ساجن کرتے ہیں مداراتیں

    سوداؔ کو اگر پوچھو احوال ہے یہ اس کا

    دو چار گھڑی رونا دو چار گھڑی باتیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY