عاشق تو ملیں گے تجھے انساں نہ ملے گا

مصحفی غلام ہمدانی

عاشق تو ملیں گے تجھے انساں نہ ملے گا

مصحفی غلام ہمدانی

MORE BYمصحفی غلام ہمدانی

    عاشق تو ملیں گے تجھے انساں نہ ملے گا

    مجھ سا تو کوئی بندۂ فرماں نہ ملے گا

    ہوں منتظر لطف کھڑا کب سے ادھر دیکھ

    کیا مجھ کو دل اے طرۂ جاناں نہ ملے گا

    کہنے کو مسلماں ہیں سبھی کعبے میں لیکن

    ڈھونڈوگے اگر ایک مسلماں نہ ملے گا

    ناصح اسے سینا ہے تو اب سی لے وگرنہ

    پھر فصل گل آئے یہ گریباں نہ ملے گا

    رہنے کے لیے ہم سے گنہ گاروں کے یا رب

    کیا شہر عدم میں کوئی زنداں نہ ملے گا

    ہونے کی نہیں تیری خوشی سرو خراماں

    تا خاک میں یہ بے سر و ساماں نہ ملے گا

    دل اس سے تو مانگے ہے عبث مصحفیؔ ہر دم

    کیا فائدہ اصرار کا ناداں نہ ملے گا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY