Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

آسماں میں چاند تاروں کے سوا کچھ بھی نہیں

اروند شرما اذان

آسماں میں چاند تاروں کے سوا کچھ بھی نہیں

اروند شرما اذان

MORE BYاروند شرما اذان

    آسماں میں چاند تاروں کے سوا کچھ بھی نہیں

    ان اجالوں میں رکھا کیا ہے بھلا کچھ بھی نہیں

    میں زمیں اور آسماں کے بیچ میں موجود ہوں

    میرے اندر بس خلا ہے اور بچا کچھ بھی نہیں

    زندگی بھی دیکھیے بس رائیگاں گزری میری

    عمر تو گزری مگر مجھ کو ملا کچھ بھی نہیں

    کون ہوں میں کیا ہوں آخر کیا حقیقت ہے مری

    سوچتا ہوں سوچنے کا فائدہ کچھ بھی نہیں

    میں نے ہر انداز سے پرکھا ہے میری زیست کو

    خواہشوں کے ایک جنگل کے سوا کچھ بھی نہیں

    گھر میں پھیلی ہے تری بھینی سی خوشبو ہر جگہ

    بکھرے پنے ہیں مگر ان پر لکھا کچھ بھی نہیں

    اٹھ رہی ہے ہر طرف جلتے شراروں کی فصیل

    زندگی اور موت کا یہ مسئلہ کچھ بھی نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے