آتش حسن سے اک آب ہے رخساروں میں

مضطر خیرآبادی

آتش حسن سے اک آب ہے رخساروں میں

مضطر خیرآبادی

MORE BYمضطر خیرآبادی

    آتش حسن سے اک آب ہے رخساروں میں

    اے تری شان کہ پانی بھی ہے انگاروں میں

    دم نکل جائے گا رخصت کا ابھی نام نہ لو

    تم جو اٹھے تو بٹھا دوں گا عزاداروں میں

    جا کے اب نار جہنم کی خبر لے زاہد

    ندیاں بہہ گئیں اشکوں کی گنہ گاروں میں

    نوبتیں نالۂ‌ رخصت کا پتا دیتی ہیں

    ماتم عشق کی آواز ہے نقاروں میں

    مجھ کو اس درد کی تھوڑی سی کسک ہے درکار

    جو دوا بن کے بٹا ہے ترے بیماروں میں

    بے طلب اس نے دکھایا رخ روشن مضطرؔ

    نام موسیٰ کا نہیں اس کے طلب گاروں میں

    مأخذ :
    • کتاب : Khirman  (Part-11) (Pg. 74)
    • Author : Muztar Khairabadi
    • مطبع : Javed Akhtar (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY