آتش فشاں زباں ہی نہیں تھی بدن بھی تھا

فضیل جعفری

آتش فشاں زباں ہی نہیں تھی بدن بھی تھا

فضیل جعفری

MORE BYفضیل جعفری

    آتش فشاں زباں ہی نہیں تھی بدن بھی تھا

    دریا جو منجمد ہے کبھی موجزن بھی تھا

    میں اپنی خواہشوں سے وفادار تھا سو ہوں

    غم ورنہ دل خراش بھی خواہش شکن بھی تھا

    کالے خموش پانی کو احساس تک نہیں

    چہرے پہ مرنے والے کے اک بانکپن بھی تھا

    کس طرح مہر و ماہ کو کرتے الگ فضیلؔ

    شعلہ نفس جو تھا وہی گل پیرہن بھی تھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY