آوارہ آوارہ خوشبو ہم دونو (ردیف .. ن)

ماہر عبدالحی

آوارہ آوارہ خوشبو ہم دونو (ردیف .. ن)

ماہر عبدالحی

MORE BYماہر عبدالحی

    آوارہ آوارہ خوشبو ہم دونو

    جانے کس دن ہوں گے یکسو ہم دونوں

    تازہ تازہ پھولوں کی رت کہتی ہے

    کر لیں کچھ تفریح لب جو ہم دونوں

    پھر کیا شے ہے مانع ساتھ نبھانے میں

    رکھتے تو ہیں یکساں خوشبو ہم دونوں

    میں چلتا ہوں دل پر عقل و ہوش پہ تو

    جس کا توڑ نہیں وہ جادو ہم دونوں

    اپنی اپنی پہچانوں کے شیدائی

    تاریکی میں اڑتے جگنو ہم دونوں

    ٹکرائے تو ٹوٹیں گے مٹ جائیں گے

    اپنے آپ پہ رکھیں قابو ہم دونوں

    رسموں کے بندھن سے بازو کھلتے تو

    آزادی سے اڑتے ہر سو ہم دونوں

    اس میں رہ کر اس سے بچنا مشکل ہے

    دنیا ناوک افگن آہو ہم دونوں

    تصویروں کا البم لاؤ دیکھیں تو

    کتنے تھے خوش قامت خوش رو ہم دونوں

    مآخذ
    • کتاب : Hari Sonahri Khak (Ghazal) (Pg. 231)
    • Author : Mahir Abdul Hayee
    • مطبع : Bazme-e-Urdu,Mau (2008)
    • اشاعت : 2008

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY