آیا نہیں وہ جور کا خوگر تمام رات

جوہر زاہری

آیا نہیں وہ جور کا خوگر تمام رات

جوہر زاہری

MORE BY جوہر زاہری

    آیا نہیں وہ جور کا خوگر تمام رات

    تڑپا کیا مرا دل مضطر تمام رات

    نیند اس کے حسن رخ کے تصور میں آئی تھی

    دیکھا ہے برق طور کا منظر تمام رات

    یہ راز مجھ پہ شمع کے انجام سے کھلا

    کٹتی ہے ہجر یار میں کیوں کر تمام رات

    اے ہم نفس نہ پوچھ شب ہجر کا عذاب

    آنکھوں میں کاٹنی پڑی اکثر تمام رات

    اک ہم نہ ان کی یاد میں جھپکا سکے پلک

    اک وہ کہ محو بادہ و ساغر تمام رات

    وقت سحر یہ جانا کہ جاگے ہیں ہم مگر

    سوتا رہا ہمارا مقدر تمام رات

    سینچا ہے آنسوؤں سے بہت نخل آرزو

    لیکن ثمر نہ آ سکا جوہرؔ تمام رات

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY