آزاد اس سے ہیں کہ بیاباں ہی کیوں نہ ہو

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

آزاد اس سے ہیں کہ بیاباں ہی کیوں نہ ہو

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

MORE BYوحشتؔ رضا علی کلکتوی

    آزاد اس سے ہیں کہ بیاباں ہی کیوں نہ ہو

    پھاڑیں گے جیب گوشۂ زنداں ہی کیوں نہ ہو

    ہو شغل کوئی جی کے بہلنے کے واسطے

    راحت فزا ہے نالہ و فغاں ہی کیوں نہ ہو

    سودائے زلف یار سے باز آئیں گے نہ ہم

    مجموعۂ حواس پریشاں ہی کیوں نہ ہو

    احسان تیر یار ادا ہو سکے گا کیا

    جان اپنی نذر لذت پیکاں ہی کیوں نہ ہو

    جیتے رہیں گے وعدۂ صبر آزما پہ ہم

    عمر اپنی مثل وقت گریزاں ہی کیوں نہ ہو

    وحشتؔ رکیں نہ ہاتھ سر حشر دیکھنا

    اس فتنہ خو کا گوشۂ داماں ہی کیوں نہ ہو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY