اب اکثر چپ چپ سے رہیں ہیں یونہی کبھو لب کھولیں ہیں

فراق گورکھپوری

اب اکثر چپ چپ سے رہیں ہیں یونہی کبھو لب کھولیں ہیں

فراق گورکھپوری

MORE BY فراق گورکھپوری

    اب اکثر چپ چپ سے رہیں ہیں یونہی کبھو لب کھولیں ہیں

    پہلے فراقؔ کو دیکھا ہوتا اب تو بہت کم بولیں ہیں

    دن میں ہم کو دیکھنے والو اپنے اپنے ہیں اوقات

    جاؤ نہ تم ان خشک آنکھوں پر ہم راتوں کو رو لیں ہیں

    فطرت میری عشق و محبت قسمت میری تنہائی

    کہنے کی نوبت ہی نہ آئی ہم بھی کسو کے ہو لیں ہیں

    خنک سیہ مہکے ہوئے سائے پھیل جائیں ہیں جل تھل پر

    کن جتنوں سے میری غزلیں رات کا جوڑا کھولیں ہیں

    باغ میں وہ خواب آور عالم موج صبا کے اشاروں پر

    ڈالی ڈالی نورس پتے سہج سہج جب ڈولیں ہیں

    اف وہ لبوں پر موج تبسم جیسے کروٹیں لیں کوندے

    ہائے وہ عالم جنبش مژگاں جب فتنے پر تولیں ہیں

    نقش و نگار غزل میں جو تم یہ شادابی پاؤ ہو

    ہم اشکوں میں کائنات کے نوک قلم کو ڈبو لیں ہیں

    ان راتوں کو حریم ناز کا اک عالم ہوئے ہے ندیم

    خلوت میں وہ نرم انگلیاں بند قبا جب کھولیں ہیں

    غم کا فسانہ سننے والو آخر شب آرام کرو

    کل یہ کہانی پھر چھیڑیں گے ہم بھی ذرا اب سو لیں ہیں

    ہم لوگ اب تو اجنبی سے ہیں کچھ تو بتاؤ حال فراقؔ

    اب تو تمہیں کو پیار کریں ہیں اب تو تمہیں سے بولیں ہیں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    جگجیت سنگھ

    جگجیت سنگھ

    مآخذ:

    • Book : Gul-e-Naghma (Pg. 80)
    • Author : Firaq Gorakhpuri
    • مطبع : Maktaba Farogh-e-urdu Matia Mahal Jama Masjid Delhi (2006)
    • اشاعت : 2006

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY