اب غم کا کوئی غم نہ خوشی کی خوشی مجھے

انیس احمد انیس

اب غم کا کوئی غم نہ خوشی کی خوشی مجھے

انیس احمد انیس

MORE BYانیس احمد انیس

    اب غم کا کوئی غم نہ خوشی کی خوشی مجھے

    آخر کو راس آ ہی گئی زندگی مجھے

    وہ قتل کر کے مجھ کو پشیماں ہوئے تو کیا

    لوٹا سکیں گے پھر نہ مری زندگی مجھے

    سارے جہاں میں ہوتی ہے امن و اماں کی بات

    لیکن نظر نہ آئی کہیں آشتی مجھے

    نیزہ اٹھائے پھرتی ہے ہر راہ میں قضا

    ہر موڑ پر ہراس ملی زندگی مجھے

    میں گھونٹ گھونٹ جام سے بہلاؤں جی کو کیا

    بے خوف کاش کر ہی دے تشنہ لبی مجھے

    اک لذت گناہ تھی کیا لذت گناہ

    تا عمر راس آئی نہ پھر بندگی مجھے

    کچھ آرزو نہیں کہ فرشتہ بنوں انیسؔ

    کافی ہے ہاں جو لوگ کہیں آدمی مجھے

    مأخذ :
    • کتاب : SAAZ-O-NAVA (Pg. 68)
    • مطبع : Raghu Nath suhai ummid

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY