اب اس سے پہلے کہ تن من لہو لہو ہو جائے

رؤف خیر

اب اس سے پہلے کہ تن من لہو لہو ہو جائے

رؤف خیر

MORE BYرؤف خیر

    اب اس سے پہلے کہ تن من لہو لہو ہو جائے

    لہو سے قبل شہادت چلو وضو ہو جائے

    قریب دیدہ و دل اس قدر جو تو ہو جائے

    تو کیا عجب تری تعریف میں غلو ہو جائے

    بھلے ہی ہوتی ہے دنیا تمام ہو ہو جائے

    خدا نخواستہ میرے خلاف تو ہو جائے

    میں اپنا فون کبھی بند ہی نہیں رکھتا

    نہ جانے کب اسے توفیق گفتگو ہو جائے

    تمہاری چشم کرم ہی سے ہے بھرم دل کا

    وہ دن نہ آئے کہ یہ جام بے سبو ہو جائے

    ملے ملے نہ ملے فرصت و فراغت پھر

    چلو یہیں کہیں کچھ دیر ہاو ہو ہو جائے

    دماغ اس کا سنا ہے کہ آسمان پہ ہے

    مری زمین پہ چل کر لہو لہو ہو جائے

    رؤف خیرؔ کسی پر کبھی نہیں کھلنا

    جو آج یار ہے ممکن ہے کل عدو ہو جائے

    RECITATIONS

    رؤف خیر

    رؤف خیر

    رؤف خیر

    اب اس سے پہلے کہ تن من لہو لہو ہو جائے رؤف خیر

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY