اب کے بکھرا تو میں یکجا نہیں ہو پاؤں گا

راہل جھا

اب کے بکھرا تو میں یکجا نہیں ہو پاؤں گا

راہل جھا

MORE BYراہل جھا

    اب کے بکھرا تو میں یکجا نہیں ہو پاؤں گا

    تیرے ہاتھوں سے بھی ویسا نہیں ہو پاؤں گا

    مجھ کو بیمار کرے گی تری عادت اک دن

    اور پھر تجھ سے بھی اچھا نہیں ہو پاؤں گا

    یہ تو ممکن ہے کہ ہو جاؤں ترا خیر اندیش

    ہاں مگر اس سے زیادہ نہیں ہو پاؤں گا

    اب مری ذات میں بس ایک کی گنجائش ہے

    میں ہوا دھوپ تو سایہ نہیں ہو پاؤں گا

    یوں تو مشکل ہی بہت ہے مرا ہاتھ آنا اور

    ہاتھ آیا تو گوارہ نہیں ہو پاؤں گا

    تو بڑی دیر سے آیا مجھے زندہ کرنے

    اب نمی پا کے بھی سبزہ نہیں ہو پاؤں گا

    مجھ میں اتنی نہیں تاثیر مسیحائی کی

    زخم بھر سکتا ہوں عیسیٰ نہیں ہو پاؤں گا

    ان دنوں عقل کی چلتی ہے حکومت دل پہ

    میں جو چاہوں بھی تمہارا نہیں ہو پاؤں گا

    اتنا آباد ہے تجھ سے مرے اندر کا شہر

    تجھ سے بچھڑا بھی تو صحرا نہیں ہو پاؤں گا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY