اب کے ہم بچھڑے تو شاید کبھی خوابوں میں ملیں

احمد فراز

اب کے ہم بچھڑے تو شاید کبھی خوابوں میں ملیں

احمد فراز

MORE BY احمد فراز

    اب کے ہم بچھڑے تو شاید کبھی خوابوں میں ملیں

    جس طرح سوکھے ہوئے پھول کتابوں میں ملیں

    should we now be parted, in dreams we might be found

    like dried flowers found in books, fragile, fraying browned

    ڈھونڈ اجڑے ہوئے لوگوں میں وفا کے موتی

    یہ خزانے تجھے ممکن ہے خرابوں میں ملیں

    seek ye pearls of faithfulness in those lost and drowned

    it well could be these treasures in wastelands do abound

    غم دنیا بھی غم یار میں شامل کر لو

    نشہ بڑھتا ہے شرابیں جو شرابوں میں ملیں

    let love's longing with the ache of existence compound

    when spirits intermingle the euphoria is profound

    تو خدا ہے نہ مرا عشق فرشتوں جیسا

    دونوں انساں ہیں تو کیوں اتنے حجابوں میں ملیں

    neither are not god nor is my love divine, profound

    if human both then why does this secrecy surround

    آج ہم دار پہ کھینچے گئے جن باتوں پر

    کیا عجب کل وہ زمانے کو نصابوں میں ملیں

    the acts for which today I've been crucified around

    if prescribed tomorrow, then why should it astound

    اب نہ وہ میں نہ وہ تو ہے نہ وہ ماضی ہے فرازؔ

    جیسے دو شخص تمنا کے سرابوں میں ملیں

    i am not the same, nor you, our past's no more around

    like two shadows in the mists of longing to be found

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    حبیب ولی محمد

    حبیب ولی محمد

    منجری

    منجری

    روپ کمار راٹھوڑ

    روپ کمار راٹھوڑ

    نامعلوم

    نامعلوم

    RECITATIONS

    اقبال بانو

    اقبال بانو

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    اقبال بانو

    اب کے ہم بچھڑے تو شاید کبھی خوابوں میں ملیں اقبال بانو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY