اب تک شکایتیں ہیں دل بد نصیب سے

شکیل بدایونی

اب تک شکایتیں ہیں دل بد نصیب سے

شکیل بدایونی

MORE BY شکیل بدایونی

    اب تک شکایتیں ہیں دل بد نصیب سے

    اک دن کسی کو دیکھ لیا تھا قریب سے

    اکثر بہ زعم ترک محبت خدا گواہ

    گزرا چلا گیا ہوں دیار حبیب سے

    دست خزاں نے بڑھ کے وہیں اس کو چن لیا

    جو پھول گر گیا نگہ عندلیب سے

    اہل سکوں سے کھیل نہ اے موج انبساط

    اک دن الجھ کے دیکھ کسی غم نصیب سے

    نہ اہل ناز کو بھی ملے فرصت نیاز

    میں دور ہٹ گیا جو وہ گزرے قریب سے

    یہ کس خطا پہ روٹھ گئی چشم التفات

    یہ کب کا انتقام لیا مجھ غریب سے

    ان کے بغیر بھی ہے وہی زندگی کا دور

    حالات زندگی ہیں مگر کچھ عجیب سے

    سمجھے ہوئے تھے حسن ازل جس کو ہم شکیلؔ

    اپنا ہی عکس رخ نظر آیا قریب سے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    اب تک شکایتیں ہیں دل بد نصیب سے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites