اب تیری ضرورت بھی بہت کم ہے مری جاں

حبیب جالب

اب تیری ضرورت بھی بہت کم ہے مری جاں

حبیب جالب

MORE BYحبیب جالب

    اب تیری ضرورت بھی بہت کم ہے مری جاں

    اب شوق کا کچھ اور ہی عالم ہے مری جاں

    اب تذکرۂ خندۂ گل بار ہے جی پر

    جاں وقف غم گریہ شبنم ہے مری جاں

    رخ پر ترے بکھری ہوئی یہ زلف سیہ تاب

    تصویر پریشانئ عالم ہے مری جاں

    یہ کیا کہ تجھے بھی ہے زمانے سے شکایت

    یہ کیا کہ تری آنکھ بھی پر نم ہے مری جاں

    ہم سادہ دلوں پر یہ شب غم کا تسلط

    مایوس نہ ہو اور کوئی دم ہے مری جاں

    یہ تیری توجہ کا ہے اعجاز کہ مجھ سے

    ہر شخص ترے شہر کا برہم ہے مری جاں

    اے نزہت مہتاب ترا غم ہے مری زیست

    اے نازش خورشید ترا غم ہے مری جاں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے