ابھی باقی شرم تھوڑی حیا ہے

ابان آصف کچکر

ابھی باقی شرم تھوڑی حیا ہے

ابان آصف کچکر

MORE BYابان آصف کچکر

    ابھی باقی شرم تھوڑی حیا ہے

    سخن اپنا کہ دیکھو سب نیا ہے

    سفینے دور ہیں وقتاً فوقتاً

    یہ آدم رک گیا یا چل رہا ہے

    او پاگل سیدھ میں رستہ نہیں ہے

    اسی کا درد ہے جس کی دوا ہے

    مبارک چیز ہے انساں ہمیں بھی

    کبھی ٹک ہنس رہا ٹک رو رہا ہے

    ہمارا دل بھی ہے اندر تو جھانکو

    یہ چہرہ شام سے ہی خوش بڑا ہے

    بلا کا زخم ہے کچھ کم تماشا

    سنو تو شعر اک تازہ لکھا ہے

    ابان کشتہ غم اچھی سناؤ

    یہاں میں ہوں قلم ہے اور خدا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY