ابھی تو حوصلۂ کاروبار باقی ہے

وامق جونپوری

ابھی تو حوصلۂ کاروبار باقی ہے

وامق جونپوری

MORE BY وامق جونپوری

    ابھی تو حوصلۂ کاروبار باقی ہے

    یہ کم کہ آمد فصل بہار باقی ہے

    ابھی تو شہر کے کھنڈروں میں جھانکنا ہے مجھے

    یہ دیکھنا بھی تو ہے کوئی یار باقی ہے

    ابھی تو کانٹوں بھرے دشت کی کرو باتیں

    ابھی تو جیب و گریباں میں تار باقی ہے

    ابھی تو کاٹنا ہے تیشوں سے چٹانوں کو

    ابھی تو مرحلۂ کوہسار باقی ہے

    ابھی تو جھیلنا ہے سنگلاخ چشموں کو

    ابھی تو سلسلۂ آبشار باقی ہے

    ابھی تو ڈھونڈنی ہیں راہ میں کمیں گاہیں

    ابھی تو معرکۂ گیر و دار باقی ہے

    ابھی نہ سایۂ دیوار کی تلاش کرو

    ابھی تو شدت نصف النہار باقی ہے

    ابھی تو لینا ہے ہم کو حساب شہر قتال

    ابھی تو خون گلو کا شمار باقی ہے

    ابھی یہاں تو شفق گوں کوئی افق ہی نہیں

    ابھی تصادم لیل و نہار باقی ہے

    یہ ہم کو چھوڑ کے تنہا کہاں چلے وامقؔ

    ابھی تو منزل معراج دار باقی ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ابھی تو حوصلۂ کاروبار باقی ہے نعمان شوق

    0
    COMMENT
    COMMENTS
    تبصرے دیکھیے

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites