ادائے طول سخن کیا وہ اختیار کرے

مجروح سلطانپوری

ادائے طول سخن کیا وہ اختیار کرے

مجروح سلطانپوری

MORE BYمجروح سلطانپوری

    ادائے طول سخن کیا وہ اختیار کرے

    جو عرض حال بہ طرز نگاہ یار کرے

    بہت ہی تلخ نوا ہوں مگر عزیز وطن

    میں کیا کروں جو ترا درد بے قرار کرے

    قدم کو فیض جنوں سے وہ حوصلہ ہے نصیب

    جو خار راہ کو بھی شمع رہ گزار کرے

    جگائیں ہم سفروں کو اٹھائیں پرچم شوق

    نہ جانے کب ہو سحر کون انتظار کرے

    مثال ملتی ہے کتنوں کی اس دوانے سے

    چمن سے دور جو بیٹھا غم بہار کرے

    دیار جور میں رستہ ہے اک یہی ورنہ

    کسے پسند ہے اے دل کہ سیر دار کرے

    خدا کرے غم گیتی کا پیچ و تاب اے دوست

    کچھ اور بھی تری زلفوں کو تابدار کرے

    ستم کہ تیغ قلم دیں اسے جو اے مجروحؔ

    غزل کو قتل کرے نغمے کو شکار کرے

    مأخذ :
    • کتاب : kulliyat-e- Majruuh sultanpuri (Pg. 131)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY