ادب میں مدعیٔ فن تو بے شمار ملے

عبدالرحمان خان وصفی بہرائچی

ادب میں مدعیٔ فن تو بے شمار ملے

عبدالرحمان خان وصفی بہرائچی

MORE BYعبدالرحمان خان وصفی بہرائچی

    ادب میں مدعیٔ فن تو بے شمار ملے

    مگر نہ میرؔ کے غالبؔ کے ورثہ دار ملے

    جنون عشق کو دامن تو تار تار ملا

    مزا تو جب ہے گریباں بھی تار تار ملے

    بڑے مزے سے گزاری ہے زندگی میں نے

    خدا کے فضل سے حالات سازگار ملے

    کسی کے دل پہ بھلا اختیار کیا ہوگا

    بہت ہے اپنے ہی دل پر جو اختیار ملے

    یہ کیا ستم ہے کہ اعدا تو پائیں حور و قصور

    جو ان کے چاہنے والے ہیں ان کو دار ملے

    مرے مزاج کو بخشا ہے انکسار اگر

    بقدر ظرف طبیعت کو انکسار ملے

    ہر اک عمل پہ مکلف بنا کے فرمایا

    کہیں سے دیکھنا دامن نہ داغدار ملے

    مرا مذاق ہے اکرام دوستاں وصفیؔ

    وہ دل ہی پاس نہیں جس میں کچھ غبار ملے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY