افسانہ مرے دل کا دل آزار سے کہہ دو

شاہ آثم

افسانہ مرے دل کا دل آزار سے کہہ دو

شاہ آثم

MORE BYشاہ آثم

    افسانہ مرے دل کا دل آزار سے کہہ دو

    بلبل کے ذرا درد کو گلزار سے کہہ دو

    سودائے محبت نے کیا ہے مجھے مجنوں

    جا سلسلۂ گیسوئے دلدار سے کہہ دو

    مجھ تشنۂ دیدار کی ہے ہونٹوں پہ اب جان

    للہ یہ چاہ زقن یار سے کہہ دو

    گردن پہ مری سر یہ بہت بار گراں ہے

    تیغ دو دم ابروئے خم دار سے کہہ دو

    اس چشم سے کہہ دو مری رنجوری کی حالت

    پیغام یہ بیمار کا بیمار سے کہہ دو

    ہوں بندۂ الفت نہیں مذہب کی ہے خواہش

    یہ حال مرا سبحہ و زنار سے کہہ دو

    منصور صفت دل سے نکلتا ہے انا الحق

    یہ حال مرا جلد سر دار سے کہہ دو

    مژگان ستم گر نے کیا مجھ کو ہے بسمل

    اعجاز مسیحائے لب یار سے کہہ دو

    آثمؔ ہی ہوا کافر عشق شہ خادم

    اس رمز کو ہر صاحب اسرار سے کہہ دو

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY