اگر سوال وہ کرتا جواب کیا لیتا

شاذ تمکنت

اگر سوال وہ کرتا جواب کیا لیتا

شاذ تمکنت

MORE BYشاذ تمکنت

    اگر سوال وہ کرتا جواب کیا لیتا

    یہ غم اسی نے دیا تھا حساب کیا لیتا

    بہت ہجوم تھا تعبیر کی دکانوں پر

    ہمیں تھے ورنہ کوئی جنس خواب کیا لیتا

    ہمارے عہد میں ارزانئ نقاب نہ پوچھ

    میں کور چشموں کی خاطر نقاب کیا لیتا

    فرات آج رواں ہے یزید پیاسا ہے

    یہ پیاس کوئی بجھا کر ثواب کیا لیتا

    ارے جسے ورق چہرہ چہرہ یاد ہو شاذؔ

    بھلا وہ آدمی درس کتاب کیا لیتا

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Shaz Tamkanat (Pg. 547)
    • Author : Shaz Tamkanat
    • مطبع : Educational Publishing House (2004)
    • اشاعت : 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY