اہل جہاں کو مجھ سے عداوت ہے کیا کروں

کنول ایم۔اے

اہل جہاں کو مجھ سے عداوت ہے کیا کروں

کنول ایم۔اے

MORE BYکنول ایم۔اے

    اہل جہاں کو مجھ سے عداوت ہے کیا کروں

    یہ طرز انتقام محبت ہے کیا کروں

    ناکامیٔ وفا پہ ندامت ہے کیا کروں

    اے دل یہ ایک تلخ حقیقت ہے کیا کروں

    خود غم پسند میری طبیعت ہے کیا کروں

    اس کو ہر ایک رنج میں راحت ہے کیا کروں

    اظہار درد دل بھی کچھ آساں نہیں مگر

    ضبط ستم بھی ایک مصیبت ہے کیا کروں

    اپنا رہا ہوں غم کو بڑے احترام سے

    روز ازل سے یہ مری عادت ہے کیا کروں

    دل کا قرار چھین لیا کس کی یاد نے

    یہ زندگیٔ ہجر مصیبت ہے کیا کروں

    میرے پیام مہر و وفا کا اثر ہو کیا

    دنیا ہی بے نیاز محبت ہے کیا کروں

    بے وجہ جس کے ناز اٹھاتا ہوں رات دن

    اس بے وفا کو مجھ سے عداوت ہے کیا کروں

    اپنی مصیبتوں کا کسی سے گلہ نہیں

    اپنا ہی دل مرے لیے آفت ہے کیا کروں

    دل میں تڑپ ہے سوز ہے غم ہے ملال ہے

    اے جذب شوق یہ مری قسمت ہے کیا کروں

    ارمان عیش کا نہ تمنا نشاط کی

    جو مل گیا اسی پہ قناعت ہے کیا کروں

    ہمت شکن ہیں راہ محبت کے مرحلے

    ہر موڑ ہر قدم پہ مصیبت ہے کیا کروں

    خود میرا دل بھی بات مری مانتا نہیں

    اس پر بھی اب کسی کی حکومت ہے کیا کروں

    کیا خوب ہے یہ عالم دنیائے شوق بھی

    اک بے وفا سے مجھ کو محبت ہے کیا کروں

    آئے نہ آئے دل کو یقیں لیکن اے کنولؔ

    ان کے ہر ایک وعدے میں لذت ہے کیا کروں

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY