اہل جنوں تھے فصل بہاراں کے سر گئے

عباس رضوی

اہل جنوں تھے فصل بہاراں کے سر گئے

عباس رضوی

MORE BYعباس رضوی

    اہل جنوں تھے فصل بہاراں کے سر گئے

    ہم لوگ خواہشوں کی حرارت سے مر گئے

    ہجر و وصال ایک ہی لمحے کی بات تھی

    وہ پل گزر گیا تو زمانے گزر گئے

    اے تیرگئ شہر تمنا بتا بھی دے

    وہ چاند کیا ہوئے وہ ستارے کدھر گئے

    وحشت کے اس نگر میں وہ قوس قزح سے لوگ

    جانے کہاں سے آئے تھے جانے کدھر گئے

    خوشبو اسیر کر کے اڑائے پھری ہمیں

    پھر یوں ہوا کہ ہم بھی فضا میں بکھر گئے

    مآخذ:

    • کتاب : Quarterly TASTEER Lahore (Pg. 186)
    • Author : Naseer Ahmed Nasir
    • مطبع : Room No.-1,1st Floor, Awan Plaza, Shadman Market, Lahore (Issue No. 7,8 Oct 1998 To Mar.1999)
    • اشاعت : Issue No. 7,8 Oct 1998 To Mar.1999

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY