اے آہ تری قدر اثر نے تو نہ جانی

محمد رفیع سودا

اے آہ تری قدر اثر نے تو نہ جانی

محمد رفیع سودا

MORE BYمحمد رفیع سودا

    اے آہ تری قدر اثر نے تو نہ جانی

    گو تج کو لقب ہم نے دیا عرش مکانی

    یک خلق کی نظروں میں سبک ہو گیا لیکن

    کرتا ہوں میں اب تک تری خاطر پہ گرانی

    ٹک دیدۂ تحقیق سے تو دیکھ زلیخا

    ہر چاہ میں آتا ہے نظر یوسف ثانی

    معمور ہے جس روز سے ویرانۂ دنیا

    ہر جنس کے انساں کی یہ ماٹی گئی چھانی

    اک وامق نو کا ہے سمجھ چاک گریباں

    کرتی ہے جو رخنہ کوئی دیوار پرانی

    بلبل ہی سسکتی نہ تھی کچھ باغ میں تجھ بن

    شبنم گلوں کے منہ میں چواتی رہی پانی

    ہے گوش زدہ خلق مرا قصۂ جانکاہ

    جب سے کہ نہ سمجھے تھا تو چڑیا کی کہانی

    جوں شمع مجھے شرم ہے زنار کی اے شیخ

    مالا نہ جپوں رات کو بے اشک فشانی

    جس سمت نظر موج سراب آوے تو یہ جان

    ہووے گی کسی زلف چلیپا کی نشانی

    کیا کیا ملے لیلیٰ منشاں خاک میں سوداؔ

    گو اپنے بھی محبوب کی دیکھی نہ جوانی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY