aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

ایسا ایک مقام ہو جس میں دل جیسی ویرانی ہو

اکبر معصوم

ایسا ایک مقام ہو جس میں دل جیسی ویرانی ہو

اکبر معصوم

MORE BYاکبر معصوم

    ایسا ایک مقام ہو جس میں دل جیسی ویرانی ہو

    یادوں جیسی تیز ہوا ہو درد سے گہرا پانی ہو

    ایک ستارہ روشن ہو جو کبھی نہ بجھنے والا ہو

    رستہ جانا پہچانا ہو رات بہت انجانی ہو

    وہ اک پل جو بیت گیا اس میں ہی رہیں تو اچھا ہے

    کیا معلوم جو پل آئے وہ فانی ہو لافانی ہو

    منظر دیکھنے والا ہو پر کوئی نہ دیکھنے والا ہو

    کوئی نہ دیکھنے والا ہو اور دور تلک حیرانی ہو

    ایک عجیب سماں ہو جیسے شعر منیرؔ نیازی کا

    ایک طرف آبادی ہو اور ایک طرف ویرانی ہو

    مأخذ:

    Ghazal Calendar-2015 (Pg. 23.02.2015)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے