ایسا ہو زندگی میں کوئی خواب ہی نہ ہو

خلیل مامون

ایسا ہو زندگی میں کوئی خواب ہی نہ ہو

خلیل مامون

MORE BYخلیل مامون

    ایسا ہو زندگی میں کوئی خواب ہی نہ ہو

    اندھیاری رات میں کوئی مہتاب ہی نہ ہو

    سوکھے درخت کی طرح دریا میں گر پڑیں

    مرنے کے واسطے کوئی سیلاب ہی نہ ہو

    پوجا کریں مگر نہ دعا کو اٹھائیں ہاتھ

    شہر ہوس میں معبد ارباب ہی نہ ہو

    مر جائیں اس سے پہلے کہ وہ فیصلہ کریں

    ہاتھوں میں کوئی پیالۂ زہراب ہی نہ ہو

    مامونؔ جل کے خاک میں مل جائے چشم تر

    آنسو بہانے چشمۂ سرداب ہی نہ ہو

    مآخذ :
    • کتاب : Sanson Ke Paar (Pg. 212)
    • Author : Khalil Mamoon
    • مطبع : Educational Publishing House, Delhi (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY