ایسا کہاں حباب کوئی چشم تر کہ ہم

تاباں عبد الحی

ایسا کہاں حباب کوئی چشم تر کہ ہم

تاباں عبد الحی

MORE BY تاباں عبد الحی

    ایسا کہاں حباب کوئی چشم تر کہ ہم

    لب خشک یہ محیط ہے کب اس قدر کہ ہم

    ایسا نہیں غریب کوئی گھر بہ گھر کہ ہم

    ایسا نہیں خراب کوئی در بدر کہ ہم

    مدام ہی مشبک مژگان یار ہے

    لیکن نہ اس قدر رہے خستہ جگر کہ ہم

    گو آج ہم ہیں بے سر و پا دیکھیے کہ کل

    یہ راہ پل صراط کرے شیخ سر کہ ہم

    ہم بحثتے ہیں چاک گریباں پہ تیرے ساتھ

    اور دیکھیے کہ ہم سے رہے تو سحر کہ ہم

    روتے عدم سے آئے تھے روتے ہی جائیں گے

    ایسا نہیں ازل سے کوئی نوحہ گر کہ ہم

    دنیا کہ نیک و بد سے مجھے کچھ خبر نہیں

    اتنا نہیں جہاں میں کوئی بے خبر کہ ہم

    پوچھا میں اس سے کون ہے قاتل مرا بتا

    کہنے لگا پکڑ کے وہ تیغ و سپر کہ ہم

    دیواں ہمارا غور سے تاباںؔ تو دیکھ تو

    رکھتا ہے کب محیط یہ گنج گہر کہ ہم

    مآخذ:

    Deewan-e-Taban Rekhta Website)
    • Deewan-e-Taban Rekhta Website)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY