ایسا نہیں سلام کیا اور گزر گئے

محمد علی ساحل

ایسا نہیں سلام کیا اور گزر گئے

محمد علی ساحل

MORE BYمحمد علی ساحل

    ایسا نہیں سلام کیا اور گزر گئے

    جب بھی ملے کسی سے تو دل میں اتر گئے

    ظلم و ستم کے آگے کبھی جو جھکے نہیں

    ان کے نصیب ان کے مقدر سنور گئے

    کردار بیچ دینے کا انجام یہ ہوا

    دل میں اترنے والے نظر سے اتر گئے

    کچھ کیفیت عجیب رہی اپنی دوستو

    کی دوستی کسی سے تو حد سے گزر گئے

    بچوں کی بھوک ماں کی دوا اور ہاتھ تنگ

    یہ مرحلے بھی ہم کو گنہ گار کر گئے

    کچھ زندگی تو مجھ سے مسائل نے چھین لی

    جو بچ گئی تھی حادثے برباد کر گئے

    ساحلؔ جب ان کو کوئی ٹھکانہ نہیں ملا

    غم ان کے سارے میرے ہی دل میں ٹھہر گئے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    محمد علی ساحل

    محمد علی ساحل

    محمد علی ساحل

    محمد علی ساحل

    مأخذ :
    • کتاب : Kirdaar (Pg. 29)
    • Author : Mohammed Ali Sahil
    • مطبع : Voice Publication (2014)
    • اشاعت : 2014

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے